Wednesday, February 8, 2023

Salu Alay Hay Wa Aalihi Naat Lyrics | صلو علیہ وآلہ

LyricsSalu Alay Hay Wa Aalihi Naat Lyrics | صلو علیہ وآلہ

Read Salu Alay Hay Wa Aalihi Lyrics In Urdu and English. This Naat for our Prophet Hazrat Muhmmad S.A.W is one of the popular Naats recited ever in the world.

Salu Alay Hay Wa Aalihi Naat Lyrics

sallu alaihi wa alihi
sallu alaihi wa alihi

jo na hota tera jamal e hi tu jhan tha khawab o kahiyali

sallo ali hay waalli hi
saloo alihay wallihi

mah o mahr mai teri roshni hoi khatmm tujh pay paymbri
nahi tujh sa tera siwa koi
kary kon teri barabri
yh nahi kisi ki majjal e hi

saloo ali hay wa ali hi
sallo ali hay waalli hi

na faseel ha na mahn sara
tera farsh hai wohi ghoria
teray jisam e pak pay wo kabba
woi tar tar ja ba ja
wo bhi tar tar ha ja ba ja
teri saddgi ha kamml e hi

salo ali hay walihi
sallo ali hay waalli hi

tu kleel ai tu kalm ha tu rauf hai tu raheem hai
tu habib e rab e karim hai teri shan sab say azeem hai
nahi koi tera misal hi

sallo ali hay waallihi
sallo ali hay waallihi

na faseel ha na mahal sara tera farsh hai wohi goria
tery jism e pak  pay ek kabba wo bhi tar tar ha ja baja
teri saddgi hai kamml e hi

sallo ali hay waalli hi
sallo ali hay waalli hi
sallo ali hay waalli hi
sallo ali hay waalli hi

Salu Alay Hay Wa Aalihi Naat Lyrics In Urdu & Arabic

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

کہا جبریل نے با ادب، کہ خدا نے تمہیں کیا طلب
ہے تمہارے نور کا جلوہ سب، کہ تمہی تو ہو اِک حبیبِ رب

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

کیا چاک سینۂ پاک کو، کیا صاف قلب بے باک کو
ہوا حکم ہفت افلاک کو، کہ انہی پہ ہے فخر بس خاک کو

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

جو براق لے کے ہوا رواں، تو عجیب لطف رہا وہاں
وہ براق تھا جو ابھی یہاں، فقط ایک جھپک میں گیا کہاں

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

چلے لا مکاں کو مکاں سے جب، بکمالِ شوقِ لقائے رب
تھے پَرے جمائے فرشتے سب، تھا زباں پہ اُنکی بصد ادب

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

گئے کعبہ سے جو وہ قدس تک، تو زمانہ سارا گیا چمک
ہوا نُور ارض سے تا فلک، ہوا محوِ دید ہر اِک ملک

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

وہاں منتظر تھے سب انبیاء، پئے خیرِ مقدمِ مصطفیٰ
تھے وہ مقتدی تو یہ مقتدا، سُنا سب نے خطبہ حضور کا

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

گئے بیتِ قدس سے جو مصطفٰے، تو تھاپَل میں سدرۃ المنتہیٰ
کہا جبرئیل نے سیّدا، کہ ہے آگے رستہ حضور کا

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

یہاں رفرف آپ کے زیرِ پا، وہاں سب حجاب دئیے اُٹھا
چلی آرہی تھی یہی صدا، کہ قریب آمِرے مصطفٰے

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

سرِ عرش جلوہ کُنا ہوئے، شبِ تارِ نورِ فشاں ہوئے
وہ ورائے کون و مکاں ہوئے، تو فرشتے زمزمہ خواں ہوئے

بلغ العلیٰ بکمالہٖ، کشف الدجیٰ بجمالہٖ
حسنت جمیع خصالہٖ، صلو علیہ وآلہٖ

ہوئے دو کماں سے قریب تر، تو ادب کے ساتھ اُٹھی نظر
یہاں عبدیت تھی کمال پر، اور علومِ حق کے کُھلے تھے در

You Might Love To Read:

More From Author